What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

اگر یہ صحیح ہے تو ۔ ۔ ۔

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 8, 2007

حکومت پاکستان اور لال مسجد کی انتظامیہ کے درمیان غلط فہمیاں پیداکرنے والاسرکاری افسر کو گرفتار کرلیا گیا ہے تاہم ابھی اس کا نام صیغہ راز میں رکھا جارہا اورمزید تحقیقات کی جارہی ۔ذرائع کے مطابق جب بھی حکومت اورلال مسجد کے درمیان مفاہمت ہوتی نظر آتی تو یہ سرکاری افسر دونوں طرف غلط فہمیاں پیداکردیتا اورمعاملات پھر تعطل کا شکار ہوجاتے ۔ یہ بھی بتایا گیاہے کہ اسی سرکاری افسر نے لال مسجد کے مہتمم اعلی مولانا عبدالعزیز غازی کو برقعہ پہن کر باہر آنے کامشورہ دیا اور کہا کہ حکومت اور آپ کے درمیان ڈائیلاگ کروا دوں گا جس پر مولانا عبدالعزیز برقعہ پہن کر باہر نکل آئے اور گرفتار ہوگئے ۔ذرائع کے مطابق حکمران جماعت کے سربراہ چوہدری شجاعت حسین اوروفاقی وزیر اعجاز الحق جب بھی لال مسجد کی انتظامیہ سے معاملات طے پاکر باہر نکلتے تو یہ افسر لال مسجد جا کر حکومت کی غلط پلاننگ بتاکر دونوں بھائیوں کو مشتعل کردیتا لیکن ابھی حکومت اس گرفتار شخص کانام بتانے سے گریز اں ہے جبکہ لال مسجد کی انتظامیہ بھی اس شخص کا نام نہیں بتا رہی ۔لیکن یہ حقیقت ہے کہ حکومت اور لال مسجد کی درمیان تنائو پیدا کرنے میں کوئی نہ کوئی خفیہ ہاتھ موجود تھا جسکے مذموم ارادے کامیاب ہوئے اور پاکستان کا دارالخلافہ اسلام آباد آج میدان جنگ بناہوااور پاکستان کے مدارس دنیا بھر میں اپنا مقام کھو چکے ہیں

Advertisements

8 Responses to “اگر یہ صحیح ہے تو ۔ ۔ ۔”

  1. Meesna02 said

    پاکستان کا دارالخلافہ ?

    Konsi khilafat ka darul khilafa hai yeah? 🙂

    Galban darul hakoomat behtar lafz hai..

  2. Meesna02 said

    PS: Ub musharaf khalifa bhee ho gai? 🙂

  3. زکریا said

    یہ خبر اسی اخبار خبریں میں چھپی ہے جو افواہیں پھیلانے میں مہارت رکھتا تھا؟ اور شاید پاکستان کا پہلا باقاعدہ ٹیبلائڈ اخبار تھا۔

  4. umair said

    sachi ???

  5. اجمل said

    Meesna02 صاحب
    آپ کو میں نقطہ چینی سے روک تو نہیں سکتا لیکن یہ نقطہ چینی اگر آپ اخبار کی ویب سائت پر کرتے تو بہتر ہوتا ۔

  6. اجمل said

    زکریا بیٹے
    یہ وہ اخبار نہیں ہے جو پاکستان میں چھپتا ہے بلکہ کسی صاحب نے جو شائد شرق الاوسط میں ہیں ایک آن لائن اخبار بنایا ہوا ہے

  7. اجمل said

    عمیر صاحب
    سچّی یا جھوٹی کا تو مجھے علم نہیں ۔ میں نے تو اسے اس لئے نقل کیا کہ قارئین دیکھیں لوگ کیا کیا سوچتے ہیں ۔
    آپ ذرا غور کیجئے ان خبروں پر جو ہمیں روزانہ سننے کو مل رہی ہیں ۔ مثال کے طور پر حکومت کو یہ تو معلوم نہیں ہے کہ جامع حفصہ اور لال مسجد میں کتنے لوگ ہیں مگر انہیں یہ معلوم ہے کہ کچھ فارسی بولتے ہیں کچھ پشتو اور کچھ عربی ۔ مزید یہ بھی معلوم ہے کہ گیارہ طالبات نے لال مسجد کی انتظامیہ کے خلاف بھوک ہڑتال کی ہوئی ہے ۔

  8. Jeanne said

    You have shed a ray of suhsnine into the forum. Thanks!

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: