What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

Archive for جولائی 3rd, 2007

آبپارہ اسلام آباد میں 10 ہلاک 400 زخمی

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 3, 2007

آج 6 بجے سہ پہر تک ایک رینجر ۔ ایک صحافی ۔ ایک دکاندار ۔ ایک جامعہ حفصہ کی 15 سالہ طالبہ اور 6 لال مسجد کےطلباء ہلاک ہونے کا پتہ چلا ہے جبکہ یہ تعداد زیادہ ہو سکتی ہے ۔ زخمی ہونے والوں کی تعداد 400 کے قریب ہے ۔ زخمیوں میں اکثریت طالبات اور طلباء کی ہے ۔ 6 بجے تک رینجرز کی طرف سے گیس شیل اور گولیوں کی فارنگ جاری تھی جبکہ لال مسجد کی طرف سے کبھی فائرنگ ہوتی تھی اور کبھی بند رہتی تھی ۔ رینجرز بکتربند گاڑیوں پر سوار ہیں ۔ آبپارہ کے کافی عام لوگ لال مسجد اور جامعہ حفصہ کے اردگرد پتھروں سے رینجرز کا مقابلہ کر رہے ہیں ۔

Advertisements

Posted in خبر | 7 Comments »

جنگ آن لائن کے مطابق

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 3, 2007

لال مسجد کے نائب خطیب مولانا عبدالرشید غازی نے کہا ہے کہ اسلام آباد انتظامیہ کے ساتھ معاہدہ ہوگیا تھا کہ تمام غیر قانونی سرگرمیوں سے اُنہیں آگاہ کریں گے اس کے باوجود کارروائی کی جارہی ہے جو سمجھ سے بالا تر ہے۔ جیو نیوز سے گفت گو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آنسو گیس کی شیلنگ اور فائرنگ کا آغاز رینجرز نے کیا۔شیلنگ اور بھگدڑ مچنے کے باعث سو سے ڈیڑھ سو کم عمر بچیاں زخمی ہوئی ہیں جن میں سے کچھ بچیوں کو اسپتال لے جایا گیا ہے۔ مولانا عبدالرشید غازی نے مطالبہ کیا کہ لیڈی ڈاکٹر جامعہ حفصہ بھیجی جائیں جو زخمی بچیوں کا علاج کریں ۔ ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ طلبہ کے پاس کوئی جدید اسلحہ نہیں بلکہ ٹرپل ٹو رائفل اور تیس بور کے لائسنس یافتہ ہتھیار ہیں ۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ رینجرز یا پولیس کے کسی افسر نے لال مسجد انتظامیہ سے رابطہ نہیں کیا بلکہ انہوں نے خود آج صبح ایس ایس پی اسلام آباد سے رابطہ کیا تو انہوں نے کہا کہ اوپر سے جو حکم ملتا ہے اس پر عمل کرتے ہیں ۔ مولانا عبدالرشید غازی نے کہا کہ گزشتہ دنوں اسلام آباد انتظامیہ کے ساتھ یہ طے پایا تھا کہ تمام غیر قانونی سرگرمیوں سے انتظامیہ کو آگاہ کیا جائے گا۔ طلبہ نے ایسے کئی معاملات کی نشاندہی کی جن پر انتظامیہ کی طرف سے کارروائی بھی کی گئی لیکن آج صبح اچانک لال مسجد اور جامعہ حفصہ کا محاصرہ کرلیا گیا اور کارروائی شروع کردی گئی جو سمجھ سے بالا تر ہے ۔

Posted in خبر | 6 Comments »

لال مسجد پر کاروائی

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 3, 2007

پیر 2 جولائی تک لال مسجد کے ارد گرد 1500 مسلّح رینجرز اور 500 کمانڈو پولیس تعینات کر دی گئی تھی ۔ آج لال مسجد اور جامعہ حفصہ پر گیس کے گولے پھینکے گئے جس سے دو طالبات زخمی اور کئی بیہوش ہو گئیں ۔ اس کے بعد فائرنگ شروع ہو گئی ۔ اب تک ایک رینجر کے مرنے کی اطلاع ملی ہے ۔ اے ایف پی کے مطابق بعد دوپہر دو بجے تک دو پولیس مین اور آٹھ طالبات زخمی حالت میں ہسپتال پہنچ چکے تھے ۔ ہسپتال کے مطابق ابھی اور زخمی آ رہے ہیں ۔ اس وقت بعد دوپہر پونے چار بج چکے ہیں

عدالتِ عظمٰی میں حکومت کو 2 جولائی کو جو ہزیمت اُٹھانا پڑی یہ عوام کی اس سے توجہ ہٹانے کی ایک بودی کوشش لگتی ہے

Posted in خبر | 2 Comments »

کمپیوٹر سے پہلی ملاقات

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 3, 2007

محب علوی صاحب نے کچھ دن قبل اسلام آباد کے سِیرینا ہوٹل میں ایک کمپیوٹر سافٹ ویئر کانفرنس کا حال لکھا تھاجس نے مجھے گذرا زمانہ یاد کرا دیا ۔ ستمبر 1985 عیسوی میں مجھے جنرل منیجر ایم آئی ایس [Management Information Systems] لگا دیا گیا ۔ ایم آئی ایس میں پاکستان کا پہلا اور سب سے بڑا کمپیوٹر سنٹر تھا جس میں آئی بی ایم کا مین فریم کمپیوٹر نصب تھا ۔ اُن دنوں مجھے کمپیوٹر کی سُدھ بُدھ نہ تھی ۔ جو صاحب کمپیوٹر سینٹر کے انچارج تھے وہ مجھ سے بہت جونیئر تھے مگر اسی گریڈ میں پہنچ گئے تھے جس میں کہ میں تھا ۔ اُنہوں نے مجھے اتنا ڈرایا کہ جیسے میں ساری عمر کمپیوٹر کو سمجھ نہ سکوں گا ۔

اللہ کا کرنا ایسا ہوا کہ وسط 1986 عیسوی میں مجھے Computerised Inventory Management System کی development اور implementation کا پروجیکٹ دے دیا گیا ۔ میرے لئے Inventory Management System تو مشکل کام نہ تھا کیونکہ یہ پروجیکٹ تو اللہ کے فضل سے میں 1970 عیسوی سے قبل اپنی فیکٹری کیلئے سرانجام دے چکا تھا جہاں ہزاروں قسم کے materials اور tooling تھی مگر کمپیوٹر سینٹر کے انچارج مجھے کمپیوٹر سینٹر سے دور رکھنے کیلئے پورا زور لگا رہے تھے ۔ میں نے بغیر اس کی شکائت کئے زیادہ کام کا بہانہ بنا کر اعلٰی سطح پر بات کی اور تین پی سی XT8088 خرید لئے اُن میں 20MBکی ہارڈ ڈسک ڈرائیوز لگی ہوئی تھیں جسے دیکھنے کیلئے دُور دُور سے لوگ آتے تھے کیونکہ آئی بی ایم کے مین فریم کمپیوٹر کی Storage capacity کل 50MB تھی ۔ میں نے دو اور انجنیئروں کو ساتھ ملا کر ان کمپیوٹروں پر ابتدائی کام شروع کردیا ۔

تمام کوائف اکٹھا کرنے کے بعد جب میں نے سسٹم اور مطلوبہ صفحات ڈیزائین کر لئے تو کمپیوٹر سینٹر کو مربوط سافٹ ویئر ڈویلوپ کرنے کا حکم دلوا دیا ۔ دو ماہ گذر گئے مگر کمپیوٹر سینٹر کے درجن بھر ماہرین کچھ بھی نہ کر سکے ۔ نتیجہ یہ ہوا کہ ڈنمارک کی ایک کمپنی کے متعلقہ ماہرین کی خدمات حاصل کی گئیں جو بنا بنایا پیکیج دینا چاہتے تھے مگر وہ ہمارے کام کیلئے زیادہ مفید نہ تھا ۔ فیصلہ ہوا کہ میں اُن کے ساتھ مل کر کام کروں گا ۔ پراجیکٹ بہت وسیع اور مشکل تھا پھر بھی اللہ سُبحانُہُ و تعالٰی نے 18 ماہ میں سافٹ ویئر ڈیویلوپ کرا دی ۔ جب data entry کا وقت آیا ۔ تب مجھے خیال آیا کہ اگر ایک آئیٹم کو غلطی سے دو بار فَولِیو الاٹ کردیا ۔ یا ایک فَولِیو پر دو آئیٹم درج کر دیئے ۔ تو ایسی غلطی پکڑنا بہت ہی مشکل ہو گا کیونکہ آئیٹمز کی تعداد پچاس ہزار سے زیادہ تھی اور یہ مختلف فیکٹریوں سے تعلق رکھتے تھے ۔ میں نے پھر کمپیوٹر سنٹر کے انچارج سے کہا کہ کوئی ایسی سافٹ ویئر بنا دیں کہ duplication نہ ہو ایک ماہ گذر جانے کے بعد بھی اُنہوں نے کوئی جواب نہ دیا ۔

میں مئی 1987 عیسوی میں اپنا ذاتی پی سی خرید چکا تھا اور میرا بڑا بیٹا زکریا اس پر 4 ماہ کی طبع آزمائی کا تجربہ حاصل کر چکا تھا ۔ میں نے زکریا سے کہا کہ مجھے ایسا پروگرام بنا دے کہ duplication نہ ہو ۔ اس نے مجھے دو تین دن میں BASIC میں ایک چھوٹا سا پروگرام لکھ کر دیا جس کی میں نے testing کی اور وہ ٹھیک ثابت ہوا ۔ اس سے اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ Computer work میں شوق سے کامیابی ہوتی ہے نہ کہ اسناد [Certificates] اکٹھا کرنے سے ۔ بدقسمتی سے ہمارے ملک میں اسناد اکٹھا کرنے کا شوق بہت ہے ۔ کام کرنے والے کم ہیں ۔ ہمارے کمپیوٹر سینٹر کے انچارج صاحب نے آئی بی ایم کی کئی درجن اسناد حاصل کی ہوئی تھیں ۔

Posted in روز و شب | 2 Comments »