What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

جھوٹ چھپائے نہیں چھُپتا

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جون 8, 2007

پاکستان الیکشن کمیشن کے سیکرٹری کنور محمد دلشاد نے انکشاف کیا ہے کہ سال2002 عیسوی کے عام انتخابات اور صدارتی ریفرنڈم کے وقت تیار کردہ ووٹر فہرست میں شامل تقریباً 2 کروڑ ووٹرز جعلی تھے پاکستان کے الیکٹرول ایکٹ کے تحت کسی ایسے شخص کا نام انتخابی فہرست میں نہیں ہو سکتا جس کے پاس قومی شناختی کارڈ نہ ہو۔

الیکشن کمیشن نے ایک بیان جاری کیا ہے جس کے مطابق گھر گھر جا کر جو نئی ووٹر فہرستیں مرتب کی گئی ہیں ان میں کل ووٹرز کی تعداد 52،102،428 ہے جب کہ الیکشن کمیشن کی ویب سائٹ پر موجود معلومات کے مطابق سال 2002 عیسوی میں ہونے والے صدارتی ریفرنڈم اور عام انتخابات میں کل ووٹرز کی تعداد 71،900،000 کے قریب تھی ۔ جس کا مطلب ہوا کہ 19،787،572 ایسے ووٹروں کا اندراج کیا گیا تھا جو موجود ہی نہ تھے ۔ پاکستان میں آبادی کی شرح میں اضافے کو مد نظر رکھتے ہوئے بھی اگر تجزیہ کیا جائے تو نئی ووٹر فہرست میں ووٹرز کی تعداد پہلے سے زیادہ ہونی چاہیے لیکن صورتحال اس کے برعکس بنتی ہے۔

اس سے پوری طرح واضح ہو گیا ہے کہ پرویز مشرف نے ریفرنڈم کس طرح جیتا اور اس کے ساتھی 2002 کے الیکشن میں کیسے جیتے ۔ یہ ہے پرویز مشرف کا بنایا ہوا شفاف الیکشن ۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: