What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

نعمان صاحب کے خلاف ریفرنس

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر اپریل 6, 2007

جب ایک نیا حاکم گدی پر بیٹھا تو اسے ترکیب سوجھی کہ علماء کو امورِ سلطنت میں شامل کیا جائے ۔ چنانچہ ملک بھر کے علماء کو اکٹھا کیا گیا کہ دین کی باتیں ہوں گی ۔ اجلاس کے دوران اچانک حاکم نے علماء سے پوچھا "آپ کا کیا خیال ہے کہ اللہ نے جو مجھے حکومت دی ہے میں اس کا اہل ہوں ؟” کئی علماء نے کہا ” بالکل آپ سے بہتر اس کا اہل ہماری نظر میں کوئی نہیں” ۔

ایک معروف عالم خاموش بیٹھے رہے ۔ حاکم نے پوچھا "نعمان ۔ تمہارا کیا خیال ہے ؟” نعمان صاحب نے کہا "تم اپنے ضمیر سے پوچھو ۔ تم چاہتے ہو کہ علماء تمہارے ہر جائز و ناجائز فعل کی حمائت کریں تاکہ عوام سمجھیں کہ تمہارا ہر فعل دین اسلام کے مطابق ہے حالانکہ تمہارے حاکم بننے پر دو اہلِ فتوٰی کا اجماع نہیں ہوا "۔

اجلاس کے بعد حاکم نے کافی نقدی دے کر اپنے ایلچی کو بھیجا کہ اگر نعمان اسے قبول کرے تو اسے قتل کر دینا اور قبول نہ کرے تو واپس آ جانا ۔ نعمان صاحب نے نقدی نہ لی ۔ پھر حاکم نے نعمان صاحب کو بلا کر کہا "آپ چیف جسٹس کا عہدہ قبول کر لیں کیونکہ ہمیں آپ کے علاوہ کوئی اس کا اہل نظر نہیں آتا "۔ نعمان صاحب نے کہا "میں اس کا اہل نہیں ہوں کیونکہ موجودہ حالات میں میرے لئے صحیح فیصلہ مشکل ہو گا "۔ حاکم نے بہت اصرار کیا اور ترغیبات بھی دیں مگر نعمان اپنے فیصلہ پر قائم رہے ۔ حاکم نے انہیں قید میں ڈال دیا اور حکم دیا کہ نعمان کو روزانہ دس کوڑے اس دن تک لگائے جائیں جب تک وہ چیف جسٹس کا عہدہ قبول نہ کر لے ۔ روزانہ کوڑے لگتے رہے لیکن نعمان صاحب نے اپنا مؤقف نہ بدلا ۔ آخر ایک دن حاکم نے بلا کر کہا ” نعمان ۔ اپنے اوپر ترس کھاؤ اور چیف جسٹس کا عہدہ قبول کر لو اس سے تمہاری عزت بھی بڑھے گی اور زندگی بھی آسائش سے گذرے گی”۔ نعمان صاحب نے جواب دیا "اللہ آپ کا بھلا کرے لیکن میں اس عہدہ کا اہل نہیں”۔

حکمران نے غصے میں کہا "تم جھوٹ بولتے ہو”۔ تو نعمان صاحب نے کہا "آپ نے خود ہی میری تصدیق کر دی ۔ بھلا جھوٹ بولنے والے کو کوئی چیف جسٹس بناتا ہے ؟” حاکم نے پھر نعمان صاحب کو قید میں ڈال دیا ۔ تقریباً چھ سال بعد نعمان صاحب نے قید ہی میں وفات پائی ۔

یہ شخص نعمان بن ثابت تھے یعنی امام ابو حنیفہ رحمتہ اللہ علیہ جنہوں نے 767 ء میں وفات پائی اور حاکم تھے ابو جعفر منصور عباسی ۔
بارہ سو سال سے حاکم اس کہانی کو دہراتے چلے آ رہے ہیں لیکن جابر حاکم کے سامنے نعرۂِ حق بلند کرنے والے اللہ کے بندے مر کر بھی زندہ رہتے ہیں ۔ اب تو یہ حال ہے ۔
نثار میں تیری گلیوں پہ اے وطن کے جہاں ۔ ۔ ۔ چلی ہے رسم کہ کوئی نہ سر اُٹھا کے چلے

Advertisements

10 Responses to “نعمان صاحب کے خلاف ریفرنس”

  1. فیصل said

    وائے افسوس کہ میں جس امام کو پیشوا مانتا ہوں اس سے متعلق اتنی اہم بات مجھے آج پتہ چلی۔ انکل اللہ آپ کو جزائے خیر دے، آمین۔

  2. آپ نے نعمان کے ساتھ صاحب لگایا تو میں سمجھا نعمان یعقوب کی بات ہو رہی ہے ۔ پہلا پیرا پڑھ کر میں خوش ہو گیا کہ اب مزہ آئے گا ، انکل کی نعمان کے ساتھ تحریری جنگ ہوگی ، مگر پھر میری امید پر پانی پھر گیا
    😦

  3. اجمل said

    فیصل صاحب
    ہمارے ملک میں تعلیم نام کی چیز نہیں دی جاتی ۔ صرف پڑھنا لکھنا سکھایا جاتا ہے ۔ ہمارا دینی علم تو کیا سائنس میں بھی یہی حال ہے ۔

    قدیر احمد صاحب
    تو گویا آپ لوگوں کو لڑا کر خوش ہوتے ہیں ۔

  4. ہمارے اکابر یقیناً بہترین لوگ تھے۔۔۔اللہ تعالٰی ہمیں بھی ان کے نقش قدم کی توفیق عطا فرمائے۔۔۔اٰمین

  5. bsc said

    Allah Allah, kiya yad kara diya aap nay.Usooli baat hay, halankeh Abu haneefa say behter aur kaun ho sakta tha. Ihtiyat ‘Numan Saheb’ key laiq-e-taqleed hay. Unkay shagird Imam abu Yusuf chief justice huay thay aur ‘Hanafi’ Mazdhab key bunyad dalnay aur naam ka credit bhi Numan saheb ko nahin Unkay shagirdon ko jata hay jin main sab say mash-hur Amam Abu Yusuf he thay. Main regular sha’ir nahin, Ijazat ho to kahoon
    "Chaudhry, tum ik kharay insan ho
    Iftikhar-e-mulk-e-Pakistan ho
    Sach key khatir pesh ker daitay ho tum
    Apni ‘izzat ho ya apni jan ho”

  6. اجمل said

    ساجد اقبال صاحب
    بلا شُبہ وہ اللہ کے بندے تھے ۔ آپ کی دعا میں میں بھی شامل ہوں ۔ آمین ثم آمین

  7. السلام علیکم،۔
    امام ابو حنیفہ (ر) کی ساری زندگی اسی قسم کے واقعات سے بھری پڑی ہے۔ جب وہ اجتہاد کی منزل پر پہنچے تو اس کی بعد چالیس سال تک کبھی تہجد کی نماز قضا نہ کی ، جب تک کے ان کی وفات نہ ہو گٔی۔
    ان کے کٔی فتوے جن اجتہاد پر مشتمل تھے ان کے جواب خود رسول اللہ (صلعم) نے ان کو خواب میں دیٔے۔
    اور سب سے انوکھی بات یہ کہ انہوں نے دین کے باقاعدہ تعلیم قریبا پینتیس برس کی عمر میں شروع کی۔ اس سے پہلے وہ تجارت کرتے تھے اور یہی ان کا خاندانی پیشہ بھی تھا۔
    اگر کبھی موقع ملے تو امام ابو حنیفہ کی زندگی پر ایک کتاب ہے اسے ضرور پڑھیٔے۔ اصل کتاب تو عربی میں لکھی گٔی تھی جس کا نام تھا غالباً ‘عقود الجمان فی مناقبِ ابی حنیفہ النعمان’ لیکن اس کتاب کا اردو اور انگریزی میں بھی ترجمہ ہوا ہے۔ کتاب کے مصنف ہیں علّلامہ محمّد ابن یوسف صالحی دمشقی شافعی (وفات ۹۴۲ھ)۔

  8. اجمل said

    Bsc
    میں نے چاروں مشہور امام صاحبان کو پڑھا ہے اور ان میں کوئی بنیادی اختلاف نہیں پایا ۔ نہ کسی نے اپنے پیشرو پر تنقید کی لیکن آج کی دنیا میں اپنے آپ کو ان کا پیروکار کہنے والے آپس میں کم ہی اتفاق کرتے ہیں ۔ یہ بدقسمتی کہہ لیجئے یا دین سے دوری کا نتیجہ ہی ہو سکتا ہے ۔ میری ذاتی رائے میں امام ابو حنیفہ کے کتاب نہ لکھنے کی دو وجوہ ہو سکتی ہیں ۔ ایک یہ کہ وہ بہت محتاط تھے کہ ان کے لکھے سے دین میں کوئی نئی اختراع نہ نکل آئے ۔ دوسرے یہ کہ ابھی اُن کی علم حاصل کرنے کی تشفّی نہ ہوئی تھی کہ انہیں زنداں میں ڈال دیا گیا جہاں وہ چھ سال گذار کر اپنے مالک کے پاس چلے گئے ۔

    واقعی جسٹس افتخار محمد چوہدری نے مایوس قوم کو اُمید کی کرن دکھائی ہے ۔

    ابو حلیمہ صاحب
    السلام علیکم و رحمتہ اللہ
    کتاب کے حوالا کا شکریہ ۔ میں نے یہ کتاب تو نہیں دیکھی لیکن میں سُنی سنائی باتوں پر یقین نہیں کرتا اور مستند کُتب پڑھنے کی کوشش میں رہتا ہوں

  9. امام ابی حنیفہ کے زندگی پر کتابیں تو ہزاروں لکھی گئی ہیں لیکن سید مودودی رحمہ اللہ نے خلافت و ملوکیت کے آخری دو باب (Chapters) امام صاحب اور انکے شاگرد امام یوسف پر لکھے ہیں ، جو بڑی کام کی چیز ہے اور اسے پڑھنا چاہیئے ، اس سے امام صاحب کے کام اور زندگی سے متعلق کئی معلومات دستیاب ہوں گی ۔

  10. اجمل said

    روغانی صاحب
    یاد دہانی کا شکریہ ۔ میں شائد اُن دنوں آپ کی موجودہ عمر کا ہوں گا جب میں نے خلافت اور ملوکیت مودودی صاحب کی پڑھی تھی ۔ میرے پاس اب موجود نہیں ہے ۔ اسلام آباد دینی کُتب کیلئے اچھی مارکیٹ نہیں ہے ۔ دوسرے میرے مطالعہ کے کمرہ کی دیواریں کتابوں سے بھر چکی ہیں ۔ کتابیں رکھنے کا بندوبست ہو جائے تو انشاء اللہ مزید کُتب خریدوں گا ۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: