What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

نوشتۂِ دیوار

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر مارچ 10, 2007

عدالتِ عظمٰی کی ہوا کی سِیٹی
نثار میں تیری گلیوں پہ اے وطن کے جہاں
چلی ہے رسم کہ کوئی نہ سر اُٹھا کے چلے


وطن کی ہواؤں کی سَرسراہٹ

ظُلم کا بادل ہر طرف چھایا
اور لُٹ رہا ہے قومی سرمایہ
مسلمانوں اب تو جاگ اُٹھو
کہ پھر وقتِ شہادت ہے آیا
توحید کا پیغام پھیلا دو
اور اسلام کا پرچم لہرا دو
باطل کی دنیا کو بتلا دو
توحید کے ہو متوالے تُم
اسلام کے ہو رکھوالے تُم
تُم پر اللہ کی رحمت کا سایہ
مردِ مُسلماں جاگ بھی اُٹھو
کہ اب وقتِ شہادت ہے آیا

Advertisements

8 Responses to “نوشتۂِ دیوار”

  1. zZZzZZZZzzzzzzzzz!!!!!

  2. اجمل said

    اظہرالحق صاحب
    کیا آپ ڈر گئے ؟

  3. انکل جی ڈروں گا تب نا جب جاگوں گا ، سویا ہوا اور مرا ہوا برابر ہوتا ہے ۔ ۔ ۔ ۔ ذرا میرے بلاگ پر دیکھیں کہ میں کتنا زیادہ ڈرا ہوا ہوں ۔ ۔ ۔

  4. انکل جی آپ نے فلم “چنگیز خان“ کے جس ترانے کی یاد دلائی ہے جو ہماری فوجی پریڈ کی مارچ ٹون بھی ہے ، بلاشبہ وہ دلوں میں جذبہ ڈال دیتا ہے ، مگر اب فوجی اسے ایسے گاتے ہیں

    اللہ کی رحمت کا سایہ ( مشرف صاحب پر)
    توحید کا پرچم لہرایا (قاضی صاحب نے)
    اے مرد مجاہد جاگ ذرا ( عدلیہ اور مقننہ)
    اب وقت شہادت ہے آیا ( عوام کا)

    اسلام کا ہے متوالا تو ( کس کو کہ رہے ہیں ؟ )
    قرآن کا ہے رکھوالا تو ( وہ قرآن جو طاقوں پہ سجا کر اسکی حفاظت کر رہے ہیں )
    ایمان ہے تیرا سرمایہ ( اسے اب ہر کوئی بیچ رہا ہے )
    اے مرد ۔ ۔ ۔ ۔

    جاں جاتی ہے بے شک جائے ( عوام کی )
    پرچم نہ تیرا جھکنے پائے ( ہاں گِر بےشک جائے )
    غازی کو موت سے کیا ڈر ہے ( غازی بھائی بتا دو کیا ڈر ہے )
    جاں دینا جہاد اکبر ہے ( بھائی ہم پہلے جہاد اصغر کریں گے )
    قرآن نے ہے یہ فرمایا (دیکھا مغرب ٹھیک کہتا ہے )
    اے مرد مجاہد ۔ ۔ ۔ ۔

    تقدیر تیری تدبیر تیری (صدر صاحب سُن رہے ہیں نا)
    سب دنیا ہے جاگیر تیری (بُش صاحب آپ کے لئے کہا گیا ہے )
    پھر کفر مقابل ہے آیا (اسامہ جی یہ آپ کے لئے ہے )
    اے مرد مجاہد جاگ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

    ——————————-
    میں نے خود اللہ اکبر والا نعرہ نہیں لکھا جو اس ترانے کو بہت جوشیلا بناتا ہے ، شاید ہم اللہ اکبر کہنے والے اللہ کو اکبر مانتے ہی نہیں !!!

  5. اجمل said

    اظہرالحق صاحب
    شاید 1965 عیسوی میں یہ گانا ریڈیو پر لگتا تھا ۔ میں نے فلم نہیں دیکھی ۔ میں بہت کم فلمیں دیکھتا تھا اور جو کچھ کبھی دیکھا وہ سنیما ہال ہی میں رہ گیا ۔ میں نے اُسی لے پر شعر بنا دیئے ۔ آپ نے تو باقاعدہ تجزیہ کر دیا ہے ۔

  6. Saba Syed said

    اسلام و علیکم
    میں بھی ان لوگوں میں سے ہی ہوں جو اقبال کے شعر
    پیوستہ رہ شجر سے امیدِ بہار رکھ
    پر عمل پیرا ہوتے ہیں۔ مگر یہاں تو بہار آگے گزر بھی جاتی ہے مگر شجر خود ہرا ہونے سے انکاری ہے۔
    کیا کیا جائے۔
    وسلام

  7. Gul said

    Sahi waqt pay sahi kalaam paish kiya aap nay……..!

    Kaash kay aisi baatain qoum ko sudhaarnay ka saamaan ban banthain…

    PS: Aap ki aamad mairay blog par pata nahi kion mujhay pay panah muskuranay par majboor kar deti hai :-). Javaab aap kay tabsiray ka udhar hi nosh fermaiyay :).

  8. اجمل said

    صباء سیّد صاحبہ
    جب انسان اللہ کو بھول جاتا ہے تو اس کا سفر تباہی کی طرف شورع ہو جاتا ہے اور شیطان اس بدقسمت کو اس غلط فہمی میں مبتلا کر دیتا ہے کہ وہ ترقی کر رہا ہے ۔ میں اس کے متعلق ایک تحریر لکھنا چاہتا ہوں لیکن حالات دماغ کا سکون بار بار چھین لیتے ہیں ۔ اگر یہ چیف جسٹس صاحب والا واقعہ بنگلا دیش میں ہوتا تو سب لوگ سڑکوں پر نکل آئے ہوتے لیکن ہماری قوم مدہوش پڑی ہے ۔
    ہمارے پاس صرف ایک ہی حل ہے کہ وہ لوگ جو اللہ سے ڈرتے ہیں وہ ڈٹ جائیں ہر بے انصافی کے سامنے ۔

    گلِ گیتی صاحبہ
    جناب آپ کے مسکرانے سے میرا خون ایک پائینٹ تو بڑھ گیا ہو گا اللہ کرے آپ ہمیشہ مسکراتی رہیں ۔ جہاں تک قوم کا تعلق ہے آپ اپنا کام بہتریں کرتے جائیے ۔ ارے میں آپ کے بلاگ پر بھاگا بھا گیا کہ وہاں کوئی مشروب رکھا ہے مگر ۔ ۔ ۔ ہی ہی ہی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: