What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

ایک طرف غربت ۔ دوسری طرف بے حِسی

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 17, 2007


غربت سے تنگ آ کر خود کُشی

نواب شاہ (بیورو رپورٹ) کنڈیارو میں بیروزگاری سے تنگ آ کر نوجوان نے خود کو آگ لگا لی، اسے تشویشناک حالت میں نواب شاہ کے اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ متاثرہ نوجوان 9 بہن اور بھائیوں میں سب سے بڑا ہے۔ تفصیلات کے مطابق جمعہ کو کنڈیارو کے گاؤں غازی خان گوپانگ میں 24 سالہ سجاد حسین ولد میر محمد گوپانگ نے بیروزگاری سے تنگ آ کر خود پر مٹی کا تیل چھڑکنے کے بعد آگ لگا لی۔ اس نے یہ کارروائی اپنے گھر کے غسل خانے میں کی۔ شور کی آواز سن کر گھر والے پہنچ گئے اور انہوں نے آگ بجھا کر سجاد کو کنڈیارو کے اسپتال پہنچایا جہاں سے اسے حالت زیادہ خراب ہونے کی وجہ سے نواب شاہ میڈیکل کالج و اسپتال منتقل کیا گیا۔ اس سلسلے میں سجاد گوپانگ کے والد اور ریٹائرڈ پرائمری ٹیچر میر محمد گوپانگ نے بتایا کہ ان کے چار بیٹے اور پانچ بیٹیاں ہیں اور سجاد سب سے بڑا ہے۔ وہ آٹھویں جماعت پاس ہے ان کی ریٹائرمنٹ کے بعد خاندان کی ساری ذمہ داری اس کے کاندھوں پر آ گئی تھی کیونکہ پنشن کی رقم سے گزارہ کرنا مشکل ہوگیا، فاقوں کی نوبت آ گئی ہے۔

Man sells daughter to pay for surgery

KARACHI, Feb 16: A man sold his 10-year-old daughter for $500 to pay for his eye operation, a police official said on Friday.

The father, Noor Mohammad, had agreed to hand his daughter over to a fellow villager, Gul Mohammad Kalohi, once she reached puberty, said Abdul Hadi, District Police Officer for Badin, some 250km east of Karachi.

?It is a shameful incident,’ Hadi said, adding: ‘We were informed about it through a complaint made by a relative of the father.’

Police have completed their investigation of the case, but no charges have been framed yet due to a jurisdiction dispute as Kolai village, near Tando Bagho town, lay on a boundary.

Under the children’s protection law in Sindh, the man could be sentenced to a year in prison, said Zia Awan advocate. ‘Reuters’

Advertisements

8 Responses to “ایک طرف غربت ۔ دوسری طرف بے حِسی”

  1. Faisal said

    Sorry to use English but I cant type in Urdu in a nicer way, few words get messed up, i don’t know why!
    I believe such event like the one mentioned above don’t take place in a single day. We look at such events as one but in fact they are the result or culmination on many smaller, and may be unnoticeable events. For example, who knows what were the real causes of this guy’s attempt to take his own life. In what way did his family members contribute to it, e.g. may be they were pushing him too much to earn some money. How close or far was this man from religion? There can be thousands of factors playing their role. So I belive there are hundreds of thouands of people living in worse conditions but juct trying their best, in Pakistan and else where.
    Additionally, I would say that its a collective responsibility, not only of our government. And the major impetus should come from the majority i.e. the middle class. Unfortunately, this middle class is busy buying cars, plots and household luxuries. Being a student of institutions (not organizations), I must say broader partipation is a hard task (as everyone takes it as everyone else’s responsibility) but anyway we have to do it or else we all share the costs at least, sooner or later.

  2. اجمل said

    فیصل صاحب
    معذرت خواہ ہوں کہ مجھے کل ہی آپ کے میرے بلاگ پر آنے کا شکریہ ادا کرنا چاہیئے تھا ۔
    میں آپ سے اتفاق کرتا ہوں کہ نہ یہ ایک ہی دن میں ہوتا ہے اور نہ اس کی وجہ صرف ایک ہوتی ہے البتہ کسی لمحے آدی کی بیزاری عروج پر پہنچ جاتی ہے ۔ علمِ نفسیات کے مطابق خود کشی کرنے والے کے دماغ میں کچھ خلل پہلے سے ہوتا ہے جس میں سے ایک زیادہ جذباتی ہونا ہے ۔
    یہ بھی درست ہے کہ اگر کسی کو اللہ سبحانہ و تعالٰی پر یقین ہو تو وہ خود کُشی نہیں کرے گا ۔ البتہ جہاں تک ہمارے معاشرہ کا تعلق ہے ہمارے لوگوں کی اکثریت اللہ سے دور اور مادیت پرست ہو چکی ہے جس کی وجہ سے لوگ بے حِس ہوتے جا رہے ہیں جس سے معاشرتی اجتمائیت کا فقدان ہے اور دوسرے کی تکلیف کا احساس نہیں ہوتا ۔ اپنے معاشرہ کے بارے میں میں اپنے دونوں بلاگز پر بہت کچھ لکھ چکا ہوں ۔

  3. koonj said

    Subhanallah. Imagine what the poor girl would go through. And this happens all the time.

  4. اجمل said

    کُونج

    میں تو اسے دہشتگردی کہتا ہوں

  5. Dee said

    Hmmm, I dont know, if i ever dare to find a reason behind a young man commiting suicide.As the News mentioned he was supporting his familiy so he was not some person who would shy away from responsibility yet he took his own life.It is really sad.
    I cant even condmn that father who sold his child for his eye treatment.I remember reading an autobiographic account where a person mentioned during partition,his mother was hiding with his rest of the siblings from mobsters.Then one of his younger sibling who was about year old, started to cry, his mother try to calm him down and put her hand on their mouth to muffled kid’s voice, so they cant attract mobsters.Well, when mobster finally left writer found out that younger sibling has died due to asphxia.Writer said he wondered if his mother did it on purpose to save other kids.

    Its much more easier to throw stones at people but what if selling one kid means food for a very long time for the rest of the family?.I have heard about people selling their kids , in hope that their kids will have food instead of dying in front of their eyes.

    In the end , it is our collective responsibity to help these people instead of just talking about punishments.

  6. اجمل said

    ڈی صاحب
    آپ نے جس پیرائے سے لکھا ہے وہ بالکل ٹھیک ہے ۔ تین کی جان بچانے کے لئے ایک کو قربان کرنا سمجھ میں آتا ہے ۔ دیگر میں واضح کر دوں میں نے جس بے حِسی کا ذکر کیا ہے وہ اس شخص کی نہیں جس نے بیٹی کو بیچا بلکہ اربابِ اختیار اور عوام اور ان صحافیوں کی ہے جنہوں نے اس خبر کو چسکا لگا کر پیش کیا ہے ۔ آپ ذرا غور کریں کہ اس نے رقم کے عوض بیٹی کی شادی ایک بڑی عمر کے آدمی سے کرنے کا وعدہ کیا ہے جو کہ ہمارے ملک کے پسماندہ علاقوں میں عام ہے ۔

  7. یہ داستانیں ہمارے ارباب اختیار کو سننے کی فرصت کہاں، جب ہم ہی ایسی خبروں پر کان بند کرلیں۔ ہماری منزل مکمل تباہی ہی ہے۔ میرا نہیں خیال کہ ہمارے قوم اور ملک میں کوئی سدھار آئیگا۔

  8. اجمل said

    وقار علی روغانی صاحب
    اللہ ہمیں سیدھی راہ پر قائم کرے

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: