What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

Archive for فروری, 2006

اِظہار خیال کی آزادی کا بھانڈا پھر پھُوٹ گیا ۔ لندن کے میئر کو سزا ۔

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 27, 2006

میں نے 11 فروری کو لکھا تھا "ایک برطانوی اخبار کا یہودی رپورٹر لندن کے میئر کے لتے لیتا تھا ۔ میئر نے ایک دفعہ اُسے کنسنٹریشن کیمپ گارڈ [concentration camp guard] کہہ دیا ۔ پھر کیا تھا یہودی برادری نے طوفان کھڑا کر دیا اور میئر کو اپنے الفاظ واپس لینے کو کہا ۔ برطانیہ کے وزیراعظم بھی یہودیوں کے ساتھ شامل ہو گئے اور میئر کو معافی مانگنے کا کہا”ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق لندن کے میئر کن لِوِنگسٹون نے معافی نہیں مانگی تو اُسے 4 ہفتے کے لئے معطل کر دیا گیا ہے ۔ خیال رہے کہ میئر سرکاری ملازم نہیں بلکہ عوام کا منتخب نمائندہ ہوتا ہے ۔ کن لِوِنگسٹون چونکہ کیس ہار گیا ہے اسلئے اُسے اپنے اخراجات بھی دینا پڑیں گے جو تقریباً 80000 پونڈ بنتے ہیں ۔

یہ کاروائی اُسی ٹونی بلیئر صاحب نے کی ہے جو توہین آمیز خاکوں کو جائز حق قرار دے چکے ہیں ۔

ایک شخص کی معمولی دِل آزاری کرنے والے کو اِتنی بڑی سزا اور جس نے ۱یک ارب بیس کروڑ مسلمانوں کے پیغمبر کی بلاوجہ اور ناجائز توہین کی وہ حق پر ہیں ۔ یہی ہیں فرنگیوں کے اسلوب

Posted in روز و شب | 2 Comments »

ہند و پاکستان سے تعلق رکھنے والوں سے اِلتماس

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 25, 2006

نہ تو کارواں کی تلاش ہے ۔ نہ تو راہگزر کی تلاش ہے
میرے عشقِ خانہ خراب کو اِک نامہ بَر کی تلاش ہےہند و پاکستان بالخصوص ہندوستان سے تعلق رکھنے والے صاحبِ عِلم آگے بڑھیں اور بکھَیر دیں پھُول اپنے عِلم کے اپنی معلومات کے ؟

1 ۔ قدیم زمانہ میں ہندوستان میں تین ایسے حکمران ہوئے جنہیں راجہ بھَوج کہا گیا ۔ اُن میں سے کِسی کا نام بھَوج نہیں تھا ۔ کہا جاتا ہے کہ پہلا راجہ بھَوج رَسُول اللہ صلّی اللہُ علیہِ و اٰلِہِ و سلَّم کی پیدائش سے پہلے ہو گذرا تھا ۔ آخری راجہ بھَوج کا دورِ حکومت گیارہویں صدی عیسوی میں تھا ۔ اِس آخری راجہ بھَوج نے جنوبی ہندوستان کے ایک علاقہ میں پانی ذخیرہ کرنے کیلئے دو پہاڑوں کے درمیان ایک پال [ڈیم] بنوایا ۔ چنانچہ اُس علاقہ کا نام بھَوجپال پڑ گیا جس میں سے ج بعد میں حذف ہو گیا اور وہ علاقہ بھَوپال کے نام سے آج بھی موجود ہے ۔

سوال یہ ہے کہ بھَوج کا مطلب کیا ہے اور اُن تین حکمرانوں کو بھَوج کیوں کہا گیا ؟

2 ۔ موجودہ صورتِ حال مجھے معلوم نہیں ۔ ہند و پاک کی آزادی سے پہلے مَندروں میں بھَوجن دیا جاتا تھا یا بھَوجن بانٹا جاتا تھا ۔ البتہ آجکل بَھوجن عام کھانے کو کہا جا رہا ہے ۔ میری تحقیق کے مطابق بھَوجن اِسم مَفعُول ہے اور اِس کا اِسم فاعل بھَوج ہے ۔

سوال یہ ہے کہ لفظ بھَوجن کا مَنبع کیا ہے اور مَندر میں بانٹے جانے والے کھانے کو بھَوجن کیوں کہا گیا ؟

سب سے اِلتماس ہے کہ اپنی مصروف زندگی میں سے کچھ لمحات نکال کر اِس حقیقت کو اُجاگر کرنے میں میری مدد فرمائیے ۔ میں آپ کا پیشگی شکریہ ادا کرتا ہوں اور تبصرہ کے بعد پھر آپ کا شکریہ ادا کروں گا ۔

Posted in روز و شب | 2 Comments »

کون اور کیوں ؟ ؟ ؟

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 23, 2006

14 فروری کو میں لاہور میں تھا ۔ مجھے ایک دوست کے گھر جانا تھا ۔ اُسے ٹیلیفون کیا تو اُس نے کہا "ٹیکسی پر مت آؤ ۔ میرا بیٹا کار میں لینے آ رہا ہے ۔ ہم 10 بجے صبح گُلبرگ 3 سے روانہ ہوئے اور چوہدری ظہور الٰہی روڈ ۔ کینال بینک ۔ فیروزپور روڈ اور اِچھرہ سے ہوتے رحمٰن پورہ پہنچے ۔ راستہ میں وزیرِ اعلٰی چوہدری پرویز الٰہی کے گھر کے سامنے کوئی درجن جیپوں اور ایک ٹرک میں سوار اسلحہ بردار پولیس دیکھی ۔ بعد میں معلوم ہوا کہ وزیرِ اعلٰی اُس وقت دفتر جا چکے تھے اور دفتر پر اس سے زیادہ پولیس معمور تھی ۔ دوست کا بڑا بیٹا جو ملتان روڈ پر اپنی دُکان کے پیچھے تعمیراتی کام کروا رہا تھا دوپہر کا کھانا کھانے گھر آیا اور بتایا "لاہور میں مکمل ہڑتال ہے”۔ گڑبڑ کا پوچھا تو کہا ” راستہ میں دو ٹائر جلتے دیکھے ہیں اور کوئی گڑبڑ نہیں تھی ۔ پرائیویٹ گاڑیاں بغیر کسی رکاوٹ کے چل رہی تھیں”۔ 3 بجے بعد دوپہر دوست کی کار میں واپس گُلبرگ پہنچا ۔ راستہ میں کوئی ایسی چیز نہ دیکھی جس سے کسی گڑبڑ کا شُبہ ہو ۔میرے بہنوئی نے بتایا کہ اُنہیں کسی نے ٹیلیفون پر بتایا ہے کہ کچھ جوانوں نے جن کی تعداد سو ڈیڑھ سو کے درمیان ہے مال پر توڑ پھوڑ شروع کر دی ہے جبکہ جلوس کا ابھی کچھ پتہ نہیں ۔ پی ٹی وی لگایا تو کوئی خبر نہ تھی ۔ اے آر وائی ٹی وی لگایا تو کچھ جوان ایک کار توڑتے دیکھے ۔ اے آر وائی کے مطابق سو ڈیڑھ سو جوان 2 بجے بعد دوپہر اچانک مال روڈ پر نمودار ہوئے اور توڑپھوڑ شروع کر دی ۔ ان کے پاس کوئی جھنڈا یا پلے کارڈ نہ تھا اور نہ وہ کارٹونوں کے خلاف کوئی نعرہ لگا رہے تھے ۔ اصل جلوس پونے تین بجے مال پر آیا ۔ اُس وقت کچھ گاڑیوں کو آگ لگی ہوئی تھی ۔ اس کے بعد اے آر وائی سب کچھ دِکھاتا رہا ۔ رپورٹرز کا کہنا تھا کہ توڑپھوڑ اور جلانے کے اس عمل میں پولیس نے کوئی مزاحمت نہیں کی ۔ یہ حقیقت براہِ راست دِکھائے جانے والے مناظر سے بھی واضح تھی ۔

کچھ منظر اے آر وائی والے باربار دِکھا رہے تھے ۔ ان میں سے دو منظر میرے لئے ابھی تک سوالیہ نشان بنے ہوئے ہیں ۔
[1] اِس منظر میں ایک جوان کے ہاتھ میں ایک تین چار اِنچ چوڑا اور 2 فٹ لمبا کالے رنگ کا لوہے یا لکڑی کا ٹکڑا ہے اور وہ اِس کی ساتھ اسمبلی ہال کے گِرد 4 فٹ اُونچے ستونوں پر لگے ہوئے شیشے کے گلوب بڑے اِطمنان سے توڑتا جا رہا ہے اور کوئی اُسے روکنے والا نہیں ۔
[2] دوسرے منظر میں چار پانچ موٹر سائیکل نیچے اُوپر گرے پڑے ہیں ۔ نیچے والے دو تین موٹرسائیکلوں کے درمیان والے حصے سے چھوٹے چھوٹے شعلے اُٹھ رہے ہیں ۔ ایک پولیس والا سب سے اُوپر والے موٹر سائیکل کو اُٹھا کر دیکھتا ہے ۔ صاف نظر آتا ہے کہ اسے آگ نہیں لگی ہوئی ۔ پولیس والا اسے گھسیٹ کر جلتے ہوئے موٹرسائیکل کے اُوپر کر دیتا ہے ۔

توڑپھوڑ اور آگ لگانے کا سلسہ بعد دوپہر 2 بجے سے شام 6 بجے تک بلا روک ٹوک جاری رہا ۔ پولیس کی نفری بہت کم تھی اور جو تھی وہ زیادہ تر تماشائی بنی ہوئی تھی ۔ اِس سے مندرجہ ذیل سوال اُبھرتے ہیں :

[1] متذکّرہ جوان کون تھے ؟
[2] محرّم کے جلوس میں بم دھماکہ کے پیشِ نظر جلوس کے شُرکاء اور سرکاری اور نجّی املاک کی حفاظت کا بندوبست کیوں نہیں کیا گیا ؟
[3] پولیس کی اِتنی کم نفری [200 سے کم] کیوں لگائی گئی ؟ جبکہ چند دن قبل مَیراتھان کے وقت دوڑنے والوں کے تمام راستہ کو جس میں مال بھی شامل تھی پولیس نے گھیرے میں لئے رکھا تھا ۔ مال کے تو کوئی انسان قریب بھی نہیں آ سکتا تھا ۔ کہا جاتا ہے کہ مَیراتھان کی حفاظت کے لئے 2500 پولیس والوں کو معمور کیا گیا تھا
[4] مال پر 4 گھینٹے مکمل لاقانونیت رہی ۔ توڑپھوڑ اور آگ لگانے سے روکنے کی کوشش کیوں نہ کی گئی اور اِس کے لئے فوری طور پر مزید پولیس کیوں نہ بلائی گئی ؟

Posted in روز و شب | 6 Comments »

قصّہ میری گُمشُدگی کا

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 21, 2006

میں آٹھ نو دِن بلاگ سے غیرحاضر رہا ۔ کچھ حضرات کو میری صحت بارے فکر ہوئی اور اُنہوں نے میری خیریت دریافت کی ۔ ان میں سب سے پہلے دُبئی والے شعیب صاحب نے تشویش کا اِظہار کیا ۔ میں اِن حضرات کا تہہ دل سے ممنون ہوں اور اللہ کا بھی شکرگذار ہوں جس نے مجھے یہ بے لوث چاہنے والے بخشے ۔ اس دوران مجھے 16 سے 19 فروری تک ایک پینٹیم 2 کمپیوٹر کی مرافقت حاصل ہو سکی جس پر آدھی ونڈوز ایکس پی نصب تھی چنانچہ میں صرف انگریزی کی ای میل پڑھ کے جواب دے سکا ۔ اپنے بلاگ پر قارئین کے تبصرے میں نے بغیر پڑھے شائع کئے مگر ان کے جواب نہیں لکھ سکتا تھا ۔12 فروری کو میری بیوی کے بڑے بھائی [میرے خالہ زاد] کے بیٹے کی منگنی تھی ۔ 12 آدمیوں نے جانا تھا ۔ ایک وین کرایہ پر لی گئی ۔ ہم لوگ صبح 7 بجے روانہ ہوئے اور گُوجرانوالہ کے راستے 12 بجے دوپہر سیالکوٹ پہنچے ۔ لڑکے کے ماموں کے گھر جا کر تازہ دم ہوئے اور ایک بجے لڑکی والوں کے گھر پہنچے ۔ کچھ دیر سستانے کے بعد کوٹھی کے پائیں باغ میں سب نے باجماعت نمازِ ظُہر ادا کی پھر کھانا کھایا جس کے بعد رسم ہوئی ۔ میں اور میرے دو ہم زُلف خواتین والے کمرہ میں نہیں گئے اسلئے معلوم نہیں کہ رسم میں کیا ہوا ۔ لاہور سے میری بیوی کی بہن اور بہنوئی بھی آئے ہوئے تھے ۔ لاہور میں 18 فروری کو میری بیوی کے چھوٹے بھائی کی بیٹی کی شادی تھی چنانچہ ہم واپس اسلام آباد آنے کی بجائے 4 بجے بعد دوپہر اُن کے ساتھ لاہور چلے ۔ راستہ میں گوجرانوالہ میں اُن کی بیٹی کے ہاں قیام کیا اور لاہور ڈیفنس میں اُن کے گھر رات 10 بجے پہنچے ۔
13 فروری کو ہم نے ہونے والی دُلہن اور اُس کے گھر والوں سے کینال ویو جا کر ملاقات کی ۔ وہ لوگ برطانیہ سے آئے ہوئے ہیں اور ہونے والی دُلہن کی خالہ کے گھر ٹھیرے ہوئے ہیں ۔ دوپہر کا کھانا اُن کے ساتھ کھایا پھر گُلبرگ گئے اور میرے بیوی کی بھانجی کے گھر چائے پی پھر رات تک میری بیوی اور اُس کی بہن نے ہونے والی دُلہن اور دولہا کے لئے تحائف خریدے ۔ اس کے بعد ہمیں گُلبرگ میں میری بڑی بہن کے گھر اُتار کر وہ ڈیفنس میں اپنے گھر چلے گئے ۔

14 فروری کی صبح میرے ایک انجنیئرنگ کالج کے ہم جماعت اور دوست کا بیٹا آ کر اپنے گھر رحمٰن پورہ اِچھرہ لے گیا ۔ دوپہر کا کھانا اپنے دوست کے ساتھ کھا کر واپس ہوا ۔ رات کو میرے ایک دوست جو مغل پورہ کے قریب رہتے ہیں نے مدعو کیا ہوا تھا مگر شہر میں توڑپھوڑ اور آگ کا کھیل شروع ہو جانے کی وجہ سے ملتوی کرنا پڑا ۔ چنانچہ بہن کے گھر اے آر وائی ٹی وی سے صورتِ حال دیکھتے رہے ۔

15 فروری کی صبح میرے دوست آ کر مغلپورہ لے گئے ۔ دوپہر کا کھانا ہوٹل میں کھلا کے واپس چھوڑ گئے ۔
16 فروری کی صبح ہم پھر ڈیفنس میں میری بیوی کی بہن کے گھر چلے گئے ۔ ہونے والے دولہا کے گھر والے گُلبرگ میں دولہا کی دادی کے بھائی کے گھر ٹھیرے ہوئے تھے جو کہ میرے پھوپھی زاد اور میری بیوی کے چچازاد ہیں ۔ بعد دوپہر دولہا کو ملنے گئے ۔ رات کو دُلہن کے والدین نے کینال ویو میں مدعو کیا ہوا تھا سو وہاں مغرب سے پہلے پہنچ گئے ۔

17 فروری کی رات کو مہندی کے نام سے دُلہن کے والدین کی طرف سے اُن کے اپنے اور دولہا کے مہمانوں کو گُلبرگ کے شادمانی ویڈنگ ہال میں مدعو کیا گیا تھا ۔ وہاں دو ڈھول والے آئے ہوئے تھے جو ہال میں داخل ہو کر پورے شدّومد کے ساتھ ڈھول بجانے لگے ۔ مجھے یوں لگا کہ کانوں کے پردے پھَٹ جائیں گے ۔ میں نے کانوں میں اُنگلیاں ٹھونس دیں تو محسوس ہوا کہ میری پسلیاں تھرک رہی ہیں اور دل پھٹنے کو ہے ۔ میں فوراً ہال سے باہر نکل کر دور جا کھڑا ہوا اور ڈھول بجنا بند ہونے پر 40 منٹ بعد واپس آیا ۔

18 فروری کو شادی گُلبرگ کے قصرِ نُور ویڈنگ ہال میں ہوئی ۔ بارات کا وقت 9 بجے رات کا تھا ۔ لڑکی والے 8 بجے پہنچ گئے ۔ بارات 10 بجے آئی ۔ وہاں بھی ڈھول والے موجود تھے لیکن اُن کو ہال میں گھُسنے نہ دیا گیا ۔

19 فروری کو ولیمہ پھر شادمانی ویڈنگ ہال میں تھا ۔ 16 سے 19 فروری تک ہم لوگ رات کو سونے کی بجائے اگلے دن کی فجر کی نماز پڑھ کر سوتے رہے ۔ 20 فروری کو ساڑھے دس بجے صبح ڈیفنس لاہور سے روانہ ہو کر 4 بجے بعد دوپہر ایف ۔ 8 اسلام آباد اپنے گھر پہنچے ۔

Posted in روز و شب | 6 Comments »

تازہ ترین ثبوت

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 11, 2006

ملاحظہ ہو تازہ ترین ثبوت اِس بات کا کہ آزادء اِظہارِ خیال صرف اِسلام دُشمنی کیلئے جائز ہے ۔
"ڈنمارک کے اخبارا یالند پوستن کے کلچرایڈیٹر فلیمنگ روز کو ان کے اس اعلان کے بعد کہ وہ ایران کی طرف سے یورپ میں یہودیوں کی نسل کُشی کے کارٹون بھی چھاپ دیں گے اخبار کی انتظامیہ کی طرف سے چھٹیوں پر جانے کا حکم ملا”۔ بی بی سی

Posted in روز و شب | 9 Comments »

ہاتھی کے دانت ؟؟؟

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 11, 2006

مِثل مشہور ہے ہاتھی کے دانت کھانے کے اور ۔ دِکھانے کے اور ۔ اِس کا مطلب ہوتا ہے کہ دوسروں کے لئے ایک اصول یا قانون اور اپنے لئے دوسرا اصول یا قانون ۔ آج کی نام نہاد جمہوریت پسند فرنگی دنیا کا بنیادی اُصول یہی ہے ۔ رسُولِ اکرَم صَلّی اللہُ علَیہِ وَ آلِہِ وَ سَلَّم کے حضور میں گُستاخی کے بعد اِسے اِظہارِ رائے کی آزادی کہا گیا ہے ۔ حقیقت یہ ہے کہ یہ آزادی صرف مُسلمانوں کی دل آزاری کے سلسلہ میں ہوتی ہے کِسی اور سلسلہ میں نہیں ۔ اِس کی کچھ تازہ مثالیں یہ ہیں ۔1 ۔ میں ڈیوڈ اِردِنگ کا واقعہ 7 فروری کو لکھ چکا ہوں ۔ اب صرف اتنا کہوں گا کہ اگر کوئی ہالو کاسٹ سے اِختلاف کرے تو مغربی ملکوں کے مطابق یہ ناقابلِ معافی جُرم ہے اور ایسے شخص کا داخلہ آسٹریلیا ۔ کینیڈا ۔ آسٹریا ۔ جرمنی اور کچھ دیگر یورپی ممالک میں ممنوع ہے ۔

2 ۔ مسٹر ٹونی بلیئر کے پچھلے الیکشن کے دوران لیبر پارٹی نے ایک اشتہار چھاپا جس میں مخالف پارٹی کے سربراہ کو جو یہودی ہے اُڑتا ہوا سوّر دِکھایا گیا تھا ۔ اِس پر یہودیوں نے بہت غصہ دِکھایا اور معافی کا مطالبہ کیا ۔ مسٹر ٹونی بلیئر نے فوراً مطالبہ مان لیا ۔

3 ۔ ایک اور واقعہ سال پہلے کا ہے ۔ ایک برطانوی اخبار کا یہودی رپورٹر لندن کے میئر کے لتے لیتا تھا ۔ میئر نے ایک دفعہ اُسے کنسنٹریشن کیمپ گارڈ [concentration camp guard] کہہ دیا ۔ پھر کیا تھا یہودی برادری نے طوفان کھڑا کر دیا اور میئر کو اپنے الفاظ واپس لینے کو کہا ۔ برطانیہ کے وزیراعظم بھی یہودیوں کے ساتھ شامل ہو گئے اور میئر کو معافی مانگنے کا کہا ۔

4 ۔ چند سال قبل ملیشیا کے وزیراعظم [مہاتیر محمد] نے یہودیوں پر کچھ تنقید کی حالانکہ اُنہوں نے کوئی غَلَط بات نہیں کہی تھی اور یہودیوں کی خوبیاں بھی بیان کی تھیں مگر امریکہ اور یورپ میں اِس کے خلاف طوفان کھڑا کر دیا گیا تھا ۔

5 ۔ حال ہی میں جب ایران کے صدر نے کہا کہ صحیح معنوں میں ہالوکاسٹ نہیں ہوا تھا اور یہ کہ یہودیوں کو یورپ منتقل کر دینا چاہیئے تو بھی امریکہ اور یورپ میں ایک طوفان اُٹھ کھڑا ہوا تھا ۔

6 ۔ الجزیرہ ٹی وی افغانستان اور عراق کی جنگ کے دوران امریکیوں کی طرف کی خبروں کے علاوہ دوسری طرف کی خبریں بھی نشر کرتا تھا ۔ اِس پاداش میں امریکیوں نے افغانستان میں الجزیرہ کے دفتر پر بم پھینکا جس سے الجزیرہ کا ایک آدمی زخمی بھی ہوا ۔ اِسی طرح عراق میں الجزیرہ کے دفتر پر بم پھینکا جس سے الجزیرہ کا فوٹوگرافر ہلاک ہو گیا ۔

Posted in روز و شب | 4 Comments »

بڑائی کِس میں ہے ؟

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 9, 2006

بڑائی اِس میں ہے کہ
* آپ نے کتنے لوگوں کو اپنے گھر میں خوش آمدَید کہا نہ کہ آپ کا گھر کتنا بڑا ہے
* آپ نے کتنے لوگوں کو سواری مہیّا کی نہ کہ آپ کے پاس کتنی بڑی کار ہے
* آپ کتنی دولت دوسروں پر خرچ کرتے ہیں نہ کہ آپ کے پاس کتنی دولت ہے
* آپ کو کتنے لوگ دوست جانتے ہیں نہ کہ کتنوں کو آپ دوست سمجھتے ہیں
* آپ محلہ داروں سے کتنا اچھا سلوک کرتے ہیں نہ کہ کتنے عالیشان محلہ میں رہتے ہیں

Posted in روز و شب | 6 Comments »

آزادیءِ اِظہارِ خیال ۔ ہے کس ملک میں ؟

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 7, 2006

ایک ماہ سے اخبارات ۔ ویب سائٹس اور بلاگز پر یورپ میں اُٹھنے والے طوفانِ بدتمیزی کی خبریں اور مضامین بغور پڑھتا رہا ۔ جمہوریّت اور انسانیّت کا ڈھنڈورا پیٹنے والی فرنگی دنیا میں کتنی ڈِھٹائی سے اپنے غلیظ کردار کو اِظہارِ خیال کی آزادی سے تعبیر کیا جارہا ہے ۔چند ماہ قبل ایک برطانوی تاریخ دان ڈیوڈ اِرونگ کو آسٹریا میں گرفتار کر لیا گیا تھا ۔ اس کا جُرم یہ ہے کہ اس نے لیکچر دیا تھا جس میں اس نے دوسری جنگ عظیم کے دوران یہودیوں کی نازیوں کے ہاتھوں گیس چیمبرز کے ذریعہ موت کے واقعہ کے متعلق کہا تھا کہ مرنے والے یہودیوں کی تعداد مبالغہ آمیز ہے ۔ ملاحظہ ہو میرے دوسرے بلاگ پر میری26 نومبر 2005 کی تحریر

یورپ کے حکمران ایک اخبار کے کارٹونسٹ کو ایک بِلّین اور بیس مِلّین سے زائد مسلمانوں کی دل آزاری کرنے کی آزادی تو دیتے ہیں مگر ایک تاریخ دان کو کسی بات کو غلط سمجھنے کی بھی اجازت نہیں دیتے ۔ کیا یہی ہے مغربی جمہوریت ؟ کیا اسی کا نام آزادیءِ اِظہارِ خیال ہے ؟

اصل بات یہ ہے کہ فرنگیوں کے لئے ہر وہ عمل جو اسلام دشمن ہو اور ہر وہ بات جس سے اسلام ۔ پیغمبرِ اسلام یا مسلمانوں کی تضحیک ہوتی ہو یا اُنہیں تکلیف پہنچتی ہو وہ تو عین جمہوریّت ۔ آزادیءِ اظہار رائے اور روشن خیالی ہے جبکہ ان اسلام دشمنوں کے ظُلم و سِتم کے خلاف قدم اُٹھانا یا احتجاج کرنا دہشت گردی اور انتہا پسندی ہے ۔

جو لوگ "جس کی لاٹھی اُس کی بھینس” میں یقین رکھتے ہیں اُن کا علاج صرف لاٹھی ہی سے ہو سکتا ہے ۔ افسوس تو یہ ہے کہ مسلمان اپنے پیدا کرنے والے سے غافل اور دشمنوں کے غلام بن کر اپنی لاٹھی کھو چکے ہیں ۔

مشہور صحافی رابرٹ فِسک Robert Fisk لکھتے ہیں

I happen to remember how more than a decade ago, a film called the Last Temptation of Christ showed Jesus making love to a woman. In Paris, someone set fire to the cinema showing the movie, killing a young Frenchman. I also happen to remember a major US university which invited me to give a lecture three years ago. I did. It was entitled. “September 11, 2001: ask who did it but, for God’s sake, don’t ask why.” When I arrived, I found that the university authorities had deleted the phrase “for God’s sake” because “we didn’t want to offend certain sensibilities. Ah-ha, so we have ‘sensibilities’ too.

I also enjoyed the pompous claims of European statesmen that they cannot control free speech or newspapers. This is also nonsense. Had that cartoon of the Prophet shown instead a chief rabbi with a bomb-shaped hat, we would have had “anti-Semitism” screamed into our ears
Furthermore, in some European nations — France is one, Germany and Austria are among the others — it is forbidden by law to deny acts of genocide. In France, for example, it is illegal to say that the Jewish Holocaust or the Armenian Holocaust did not happen

Posted in روز و شب | 2 Comments »

یومِ یکجہتیءِ کشمیر کیوں اور کیسے

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 5, 2006

آج یومِ یکجہتیءِ کشمیر ہے ۔ یہ دن پہلی مرتبہ 5 فروری 1990 کو منایا گیا ۔ میں نے پچھلے سال ستمبرمیں دوسرے بلاگ [حقيقت اکثر تلخ ہوتی ہے] میں لکھا تھا کہ جموں کشمیر کے مسلمانوں کی آزادی کے لئے دوسری مسلح جدوجہد 1989 میں شروع ہوئی ۔ اس تحریک کا آغاز کسی منصوبہ بندی کا نتیجہ نہیں تھا اور نہ ہی یہ کسی باہر کے عنصر کی ایما پر شروع کی گئی تھی ۔بھارتی سکیورٹی فورسز کے ہر دن کے مظالم سے مقبوضہ جموں کشمیر کے مسلمان تنگ آ چکے تھے اور سب سے مایوس ہونے کے بعد پاکستان سے بھی مایوسی ہی ملی – بےنظیر بھٹو نے 1988 میں حکومت سنبھالتے ہی بھارت سے دوستی کی خاطر نہ صرف جموں کشمیر کے مسلمانوں کے ساتھ دغا کیا بلکہ بھارت کے ظلم و ستم کے باعث سرحد پار کر کے پاکستان آنے والے بے خانماں کشمیریوں کی امداد بند کر دی ۔ اِس صورتِ حال کے پیشِ نظر پاکستان کی چند سیاسی جماعتوں نے جن میں جماعتِ اسلامی پیش پیش تھی جموں کشمیر کے عوام کے ساتھ ہمدردی کے اِظہار کے لئے 5 فروری 1990 کو یومِ یکجہتیءِ کشمیر منانے کا فیصلہ کیا جو اُس وقت کی حکومت کی مخالفت کے باوجود عوام نے بڑے جوش و خروش سے منایا ۔

اہل کشمیر سے یکجہتی کا اظہار محض روایتی نوعیت کی اخلاقی ہمدردی کا مسئلہ نہیں، کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے اور اسی اہمیت کی وجہ سے برطانوی حکومت نے 1947 میں پاکستان اور بھارت کی آزاد مملکتوں کے قیام کے ساتھ ہی پوری منصوبہ بندی کے تحت یہ مسئلہ پیدا کیا۔ قیام پاکستان کے بعد کوئی ایسی دشواری نہیں تھی جو برطانوی حکومت اور برصغیر میں اس کے آخری وائسرائے نے ہمارے لئے پیدا نہ کی ہو اور سب سے زیادہ کاری ضرب جو پاکستان پر لگائی جاسکتی تھی وہ مسئلہ کشمیر کی صورت میں لگائی گئی۔ کشمیر کا مسئلہ دو مملکتوں کے درمیان کسی سرحدی تنازع کا معاملہ نہیں بلکہ کشمیریوں کی ”حق خودارادیت“ کی جدوجہد پاکستان کی بقا کی جنگ ہے ۔ کشمیر کا مسئلہ برطانوی حکومت نے پیدا کرایا ۔ وہ برصغیر سے جاتے جاتے کشمیر کو بھارت کی جارحیت کے سپرد کر گئے اور اس سروے میں مِڈل مَین کا کردار برصغیر میں برطانیہ کے آخری وائسرائے اور آزاد بھارت کے پہلے گورنر جنرل لارڈ ماؤنٹ بیٹن نے ادا کیا جس کا مقصد یہ تھا کہ اسلام کے نام پر قائم ہونے والی اس مملکت کے جسم پر ایک ناسور بنا دیا جائے اور اُس کے بعد بھارت محض اسلحہ کی طاقت کے زور پر کشمیریوں پر اپنی بالادستی قائم رکھے ہوئے ہے ۔

قوموں کی زندگی میں ایک وقت فیصلہ کا آتا ہے کہ "جھُکے سر کے ساتھ چند روز عیش قبول کرلیں” یا "سرفروشی کے ساتھ سرفرازی کی راہ اپنائیں”۔ جَبَر کرنے والے اذِیّتوں سے اور موت سے ڈراتے ہیں۔ اِیمانی توانائی موت سے نبرُد آزما ہونے کی جرأت عطا کرتی ہے۔ موت میں خوف نہیں ہوتا بکہ لذت ہوتی ہے اور جذبہءِ ایمانی کا کَیف اس لذّت کو نِکھارتا ہے۔ اہل کشمیر اب اس لذّت سے سرشار ہو چکے ہیں ۔ یہ اللہ کا کرم ہے اہل کشمیر پر اور اہل پاکستان پر بھی ۔ اہل کشمیر صرف کشمیرکیلئے حق خودارادیت کی جنگ نہیں لڑ رہے ہیں وہ پاکستان کے استحکام کی جنگ بھی لڑ رہے ہیں۔ حُرِیّت کی داستانیں اِسی طرح رَقَم ہوتی ہیں۔ بھارت کی جارحانہ طاقت اس جذبے کا مقابلہ کب تک کرے گی ۔ بھارتی فوج پوری طرح مسلح ہے لیکن وہ انسانی قدروں سے نہ صرف محروم بلکہ ان سے متصادم ہے اس لئے ناکامی اس کا مقدر ہے ۔ بھارت کشمیریوں کی حق خودارادیت کے حصول کی جنگ کو ”دہشت گردی“ کہتا جبکہ خود بھارت انسانیت کو پامال کر رہا ہے ۔

Posted in روز و شب | 6 Comments »

قانون کا غلط استعمال ۔ ایک اہم فیصلہ

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر فروری 3, 2006

میں نے حدود آرڈیننس پر اِظہارِ خیال کرتے ہوئے 23 مئی اور 26 جون 2005 کو لکھا تھا کہ اسلامی قوانین کا صحیح اِطلاق اُس وقت تک مشکل ہے جب تک ملک میں ایک رفاہی یا اِنصاف پسند حکومت قائم نہیں ہو جاتی ۔ میں نے مزید لکھا تھا کہ حدود آرڈیننس کی سب سے بڑی خامی یہ ہے کہ اِس کے صحیح اِطلاق میں نہ صِرف دُوسرے قوانین حائل ہیں بلکہ قانون کے نفاذ کا سارا نظام ہی چوپٹ ہے ۔ تفتیش کے دوران عورت کی جسمانی اور جذباتی کمزوری کا پورا فائدہ با رسُوخ ۔ جابَر یا ظالم کو دیا جاتا ہے اور زنا بالجبر [Rape] کے کیس میں بھی عام طور پر عورت کو مجرم قرار دے دیا جاتا ہے اور یہ پولیس اور قانون دانوں کے شیطانی تعاون سے ہوتا ہے ۔اللہ کی کرم نوازی دیکھئیے کہ وفاقی شریعت عدالت کے چیف جسٹس چوہدری اعجاز یوسف نے ایک عدالتی فیصلہ میں میرا نظریہ صحیح ثابت کر دیا ہے ۔ ملاحظہ ہو منگل۔ 31 مئی 2006 کو جاری ہونے والے اور یکم فروری 2006 کے اخباروں میں شائع ہونے والے فیصلہ کا خلاصہ ۔

فیصلہ
"وفاقی شرعی عدالت کی طرف سے منگل کو جاری ہونے والے ایک پریس ریلیز کے مطابق عدالت نے زنا سے متعلق مقدمہ میں ایڈیشنل سیشن جج کے فیصلہ کو کالعدم قرار دیتے ہوئے اسے ازسرنو سماعت اور فیصلہ کیلئے ٹرائل کورٹ کو واپس بھیج دیا۔ قبل ازیں ایڈیشنل سیشن کورٹ کی طرف سے عورت اور مرد دونوں کو زنا کا مرتکب قرار دیتے ہوئے قید اور جرمانہ کی سزائیں دی گئی تھیں۔ وفاقی شرعی عدالت نے اپنے فیصلے میں مزید قرار دیا کہ جب کسی مرد ملزم پر کسی عورت کی طرف سے زنا بالجبر کا الزام عائد کیا جائے تو تاخیر ۔ حمل قرار پانے یا کسی دیگر وجہ سے قطع نظر اولین مرحلے میں کسی عورت کو زنا بالرضا کے الزام میں زیر دفعہ 10 (2) چارج نہ کیا جائے جب تک زنا بالرضا کی ضروری شہادت نہ مل جائے اور مقدمہ کی الزام کے مطابق سماعت کی جائے ۔ مرد ملزم کو اس کے مطابق چارج کیا جائے اور مستغیثہ کو اپنے الزام ثابت کرنے کا موقع فراہم کیا جائے ۔ اس طریقہ کار کو اپنانے سے عورت کے خلاف غلط استغاثہ کا سدباب ہو جائے گا اور سائلہ بطور گواہ پیش ہو کر شہادت دینے کے قابل ہو گی جو مناسب طور پر استعمال ہو سکے گی ۔

واقعات کے مطابق تھانہ خان پور ضلع ہری پور میں 4 جون 1997ء کو ایک عورت نے رپورٹ درج کرائی کہ وہ گھر میں اکیلی تھی اس کے پڑوسی جمروز نے دیوار پھلانگ کر اور دروازہ بند کرکے پستول کی نوک پر اس کے ساتھ زنا بالجبر کیا اور جاتے وقت اس کو دھمکی دی کہ اگر اس نے یہ واقعہ کسی کو بتلایا تو اسے سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اس نے خوف کے مارے یہ واقعہ کسی کو نہ بتلایا۔ چند ماہ بعد معلوم ہوا کہ وہ حمل سے ہے۔ چنانچہ ملزم کے خلاف جرم زنا …نفاذ حدود… آرڈیننس 1979ء کی دفعات 5 اور 10 کے تحت درج بالا تاریخ پر پرچہ درج کر لیا گیا تاہم جب چالان عدالت بھجوایا گیا تو اس میں پولیس نے اس عورت کا بھی ملزمہ کے طور پر اندراج کیا ۔”

یہ کِس طرح ہوتا ہے ؟
دراصل عام طور پر ہوتا یہ ہے کہ پولیس چالان میں زنا بالجبر [Rape] کو زنا بالرضا [with mutual consent] لکھ دیتی ہے یا زنا بالجبر کی قانونی دفعہ کی بجائے زنا بالرضا کی قانونی دفعہ کا اندراج کر دیتی ہے جس سے کیس کی نوعیّت ہی بدل جاتی ہے ۔ اِس صورت میں چار گواہوں کی شرط بھی لاگوُ ہو جاتی ہے جو ایسے کیس میں مہیّا کرنا ناممکن ہوتا ہے ۔ اِس کے نتیجہ میں زنا بالجبر کرنے والا مرد بچ جاتا ہے اور مظلوم عورت کو بدکار قرار دے کر سزا دے دی جاتی ہے ۔ خیال رہے کہ اگر اِنصاف بانٹنے والے [جج] اِس شیطانی عمل میں شریک نہ ہوں تو کوئی وجہ نہیں کہ مظلوم عورت کو اِنصاف نہ ملے ۔ یہاں میں یہ بھی واضح کر دوں کہ میں نے پچھلے ایک سال میں بہت مطالع کیا مگر مجھے قرآن شریف ۔ حدیث حتٰی کہ کتابُ الفِقَہ میں بھی نہیں ملا کہ زنا بالجبر کے لئے چار گواہوں کی شرط ہے ۔ جو بات میری سمجھ میں آئی ہے اُس کے مطابق یہ شرط زنا بالرضا کے لئے ہے ۔ زیادہ علم رکھنے والے اِس سِلسلہ میں میری راہنمائی کر سکتے ہیں ۔

Posted in روز و شب | 1 Comment »