What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

کِشتی

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جنوری 28, 2006

میری آٹھویں جماعت کے زمانہ کی ڈائری سے ۔ 55 سال قبل لکھی ہوئی

کِشتیاں سب کی کِنارے پہ پہنچ جاتی ہیں
ناخدا جِن کا نہ ہو ۔ اُن کا خُدا ہوتا ہے

میری کِشتی خُدا کے آسرے پہ چھوڑ کے ہٹ جا
میری کِشتی اگر اے ناخدا تکلیف دیتی ہے

Advertisements

7 Responses to “کِشتی”

  1. اچھے شعر ہیں

  2. Khawar said

    جناب اجمل صاحب آپ اى ميل كر كے بتا ديتے ميرے خاندان كا كوئى نه كوئى آپ كو لينے اجاتا ـ
    ويسے ميرا گاؤں اسلاماباد سے سيالكوٹ جاتے هوئے راستے سے هٹ كر هے ـ
    ميرے گاؤں كا نام هے تلونڈى موسے خاں
    http://ur.wikipedia.org/wiki/تلونڈى_موسےخان

  3. اجمل said

    شعیب صفدر صاحب
    شکریہ مگر میں نے نہیں لکھے

    خاور صاحب
    آپ کا بہت شکریہ ۔ ہم سیالکوٹ براستہ گوجرانوالہ گۓ تھے

  4. Asma said

    ناخدا جِن کا نہ ہو ۔ اُن کا خُدا ہوتا ہے

    یہ تو ہے

  5. Asma said

    ناخدا جِن کا نہ ہو ۔ اُن کا خُدا ہوتا ہے

    یہ تو ہے

  6. Asma said

    ناخدا جِن کا نہ ہو ۔ اُن کا خُدا ہوتا ہے

    یہ تو ہے

  7. اجمل said

    اسماء جی
    تُسی سچ آکھیا اے ۔ اَے تے فیر ہے

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: