What Am I * * * * * * * میں کیا ہوں

میرا بنیادی مقصد انسانی فرائض کے بارے میں اپنےعلم اور تجربہ کو نئی نسل تک پہنچانا ہے * * * * * * * * * * * * * * رَبِّ اشْرَحْ لِي صَدْرِي وَيَسِّرْ لِي أَمْرِي وَاحْلُلْ عُقْدَةِ مِّن لِّسَانِي يَفْقَھوا قَوْلِي

ہمارا رویّہ ۔ رسم و رواج ۔ حکومت بے بس یا قانون اور اسلامی قوانین ۔ چھٹی اور آخری قسط

Posted by افتخار اجمل بھوپال پر جولائی 3, 2005

اس موضوع پر پچھلی تحریر پڑھنے کے لئے متعلقہ تاریخ پر کلک کیجئے

23-05-2005
11-06-2005
14-06-2005
20-06-2005
23-06-2005
26-06-2005

انصاف کا اسلامی نظام

انصاف کے اسلامی نظام اور مغربی جسٹس سسٹم (جو کہ پاکستان میں بھی رائج ہے) میں ایک بہت اہم فرق ہے وہ یہ کہ انصاف کے اسلامی نظام میں انصاف مہیا کرنا قاضی یعنی جج کا فرض ہوتا ہہے اور ماہر شریعت و شریعی قانون انصاف کرنے میں جج کی مدد کرتے ہیں ۔ جبکہ ہمارے ہاں جو مغربی سسٹم رائج ہے اس میں سچ جھوٹ ثابت کرنا مدعی اور مدعا علیہ کے وکلاء کی ذمہ داری ہوتی ہے اور جن کیسوں میں پولیس کا عمل دخل ہو ان میں پولیس بھی کرتب دکھاتی ہے ۔ تاریخ کے مطالعہ سے پتہ چلتا ہے کہ بڑے مذہبی عالموں کو اگر حاکم وقت چیف جسٹس کا عہدہ پیش کرے اور عالم کے خیال میں وہ حاکم منصف نہ ہو تو وہ عہدہ قبول کرنے سے انکار کر دیتے تھے خواہ انکار پر سزا بھگتنا پڑے ۔ امام ابو حنیفہ کو چیف جسٹس ببنے سے انکار پر حاکم وقت (عبّاسی خلیفہ منصور) نے قید سخت کی سزا دی ۔ چار پانچ سال بعد امام صاحب قید ہی میں وفات پا گئے ۔

ہمارا کردار اور مصائب کا حل

ذرا اپنے کردار پر بھی نظر ڈالتے ہیں ۔ ہماری حالت یہ ہو چکی ہے کہ ہمیں قانون شکنی میں مزہ آنے لگا ہے ۔ چوراہے میں بتی سرخ ہو گئی ہے مگر ہم متواتر ہارن بجاتے ہوئے نکل جاتے ہیں ۔ سڑک پر اگر داہنی طرف جگہ نہ ہو تو ہم گاڑی بائیں طرف سے نکال کر لے جاتے ہیں ۔ جہاں حد رفتار 80 کلومیٹر فی گھینٹہ ہو وہاں 120 کلو میٹر یا زیادہ تیز گاڑی چلانے میں ہم فخر محسوس کرتے ہیں ۔ انتہائی تیزی سے گاڑی آگے نکال کر دوسری گاڑیوں کے آگے بریک لگانے میں ہمیں لطف آتا ہے ۔ یہ سب اسلام آباد کی روئداد ہے جہاں بڑے پڑھے لکھے اور بڑے بڑے آفیسر رہتے ہیں ۔ تہذیب کا عمدہ نمونہ دیکھنا ہو تو یوم آزادی کو مغرب کے بعد خیابان قائد اعظم بلیو ایریا چلے جائیے اور دیکھئے کہ کوئی خاتون یا شریف آدمی بڑے گھرانوں کے نوجوانوں کی کان پھاڑنے والی موسیقی کے علاوہ ان کے غلیظ جملوں اور پٹاخوں سے محفوظ نہیں ۔ اس کاروبار میں لڑکیاں بھی پیچھے نہیں رہتیں ۔

اگر کسی جگہ قطار لگی ہو تو کوشش کی جاتی ہے کہ کسی طرح آگے پہنچ جائیں ۔ دوسروں کا حق مارنا تو ہمارا پیدائشی حق ہے ۔ یہ سب کچھ کرنے کے بعد احساس جرم کی بجائے ہمارے سینے فخر سے پھول جاتے ہیں ۔ بااصول لوگوں کو ہم نہ صرف بیوقوف گردانتے ہیں بلکہ اگر کوئی ہمیں سمجھانے کی کوشش کرے تو اسے گالی گلوچ کے علاوہ دو گھونسے رسید کرنے سے بھی دریغ نہیں کرتے ۔ اب ملاحظہ ہوں سینکڑوں میں سے صرف دو خط ۔

News Post, Thursday June 16, 2005– Jamadi Al Awwal 08, 1426 A.H.Road brats
Driving in any large city in Pakistan one cannot help notice the proliferation of "road brats”: kids in their teens who have been given a long leash by their parents. These teens — in p-caps, tee-shirts and oversized jeans, and playing loud music, and in general doing everything to look "hip” — drive around in "Dad’s multimillion-rupees automobile.” The result, rash driving, distraction for other motorists and fatal accidents. Just like the fifteen year old who was trying to take a photo from his mobile phone of the car’s speedometer while doing 140 km/hour on a residential highway. The car went out of control and hit a tree and he died. I appeal to the parents of such teen drivers to induce some discipline in their kids.
Shehzad Ahmed Mir Islamabad

Unless we change course
A country where the Constitution is treated as waste paper, where the law of necessity (read law of the jungle) enjoys precedence over the rule of law, where personalities are placed above principles, where justice is hostage to the power of the gun, where politicians are bought and sold like a bunch of bananas, where the opposition to the government is dubbed anti-state activity, where electoral results are known long before polling day, where Parliament is a rubberstamp and where hypocrisy rules — such a country cannot survive indefinitely. The only way to avert the impending disaster is grand national reconciliation to heal the wounds of the nation and give the nation a fresh start. If General Musharraf cannot unite the nation behind him, he should make way for those who know the job. If the ship of state continues to sail on its present suicidal course it is going to sink.
B. A. Malik Islamabad

یہاں کلک کر کے ایک اور رپورٹ ملاحظہ کریں ۔

ہم ظلم ہوتا دیکھیں تو بجائے روکنے کے وہاں سے کھسک جاتے ہیں یا بڑے شوق سے نظارہ کرتے ہیں ۔ البتہ سٹیج پر چڑھ کر ظلم کے خلاف لمبی تقریریں کرتے ہیں ۔

اب تک اس موضوع پر جو کچھ میں لکھ چکا ہوں اس کا ہرگز یہ مدعا نہیں کہ ہمارے ملک میں سب لوگ خراب ہیں ۔ نہیں ایسا بالکل نہیں ہے ۔ میرے اندازہ کے مطابق ایک تہائی لوگ ٹھیک ہیں مگر ان میں کچھ جاگ رہے ہیں باقیوں کو جگانے کی ضرورت ہے ۔ دوسری تہائی اچھائی کی حوصلہ افزائی سے ٹھیک ہو سکتے ہیں اور تیسری تہائی کو ٹھیک کرنا ہو گا ۔ جب پہلی تہائی پوری جاگ اٹھے گی اور دوسری تہائی کی حوصلہ افزائی کرے گی تو یہ دو تہائیاں مل کر تیسری تہائی کو ٹھیک کر سکتی ہیں ۔

اللہ سے محبت رکھنے یا جن کے دل انسانیت سے لبریز ہیں ظلم ہوتا نہیں دیکھ سکتے ۔ ایک واقعہ سنیئے ۔ سیالکوٹ کے محلہ سلہریاں میں دو جوانوں میں تکرار ہوئی بات یہاں تک پہنچی کہ ایک جوان خنجر لے کر آ گیا ۔ محلے کے لوگ (مردوں سمیت) جو کھڑے تماشہ دیکھ رہے تھے خنجر دیکھ کر گھروں میں گھس گئے ۔ ایک خاتون نے شور سن کر کھڑکی سے جھانکا تو اسے خجر لے کر آتا ہوا جوان نظر آیا ۔ وہ بھاگ کر گلی میں پہنچی ۔ اتنی دیر میں وہ جوان بھرپور وار کرنے کے لئے اپنا خنجر والا ہاتھ بلند کر چکا تھا ۔اس جری خاتون نے دونوں جوانوں کے درمیان پہنچ کر خنجر والے ہاتھ کی کلائی پکڑ کر ایسا جھٹکا دیا کہ خنجر ہاتھ سے نکل کر دور جا گرا اور جوان بھی اس غیر متوقع حملے سے دہل گیا ۔ خاتون کی اس بہادری کو دیکھ کر محلہ والوں کو حوصلہ ہوا اور انہوں نے دروازوں کے پیچھے سے نکل کر دونوں جوانوں کو قابو کر لیا ۔ وہ صرف اللہ سے ڈرنے والی خاتون اب اپنے اللہ کے پاس جا چکی ہے ۔ میرے ساتھ آپ بھی دعا کیجئے کہ اللہ اس نیک خاتون کو جنّت الفردوس میں اعلی مقام عطا کرے آمین ۔

ہمارے کردار کا ایک اور پہلو بھی قابل غور ہے ۔ ہم باتوں میں تو تعلیم کے شیدائی ہیں لیکن اگر کوئی سکالر کسی موضوع پر عمدہ تقریر کرنے والا ہو اور ہال میں داخلہ کا کوئی ٹکٹ بھی نہ ہو تو ہال آدھا خالی رہتا ہے ۔ اس کے مقابلہ میں اگر کسی ناچنے والی نے نیم برہنہ ناچ کرنا ہو یا کسی پاپ موسیقی کے ٹولے نے اپنے کرتب دکھانے ہوں تو لوگ ٹکٹ خریدنے بھی اتنے زیادہ پہنچ جاتے ہیں کہ ٹکٹ گھر اور ٹکٹ بیچنے والوں کو بچانے کے لئے پولیس بلانا پڑتی ہے ۔

موجودہ ظالمانہ نظام سے چھٹکارا پانے کے لئے سب سے پہلے ہمیں خود اپنا محاسبہ کرکے اپنے آپ کو ٹھیک کرنا ہو گا ۔ اس کے بعد حکومت یعنی اسمبلیوں اور سینٹ سے اوباش لوگوں کو نکالنا ہو گا چاہے وہ سردار ہوں ۔ وڈیرے ہوں یا جنرل ۔ یہ صرف اس وقت ہو سکتا ہے جب الیکشن کے وقت ہم سب یعنی عوام ۔ ذاتی فائدوں کی بجائے اجتمائی بہتری کا سوچتے ہوئے ۔ ۔ ۔

اول ۔ سچے اور دیانت دار امیدوار نامزد کریں ۔
دوم ۔ اپنے نامزد کردہ امیدواروں کا روپیہ خرچ کرائے بغیر رضاکارانہ طور پر بھاگ دوڑ کر کے انہیں کامیاب کرائیں ۔ کیونکہ دیانت دار شخص نے اسمبلی کا ممبر بن کے حرام مال کمانا نہیں ہوتا تو پھر وہ کیوں اپنی حلال کی کمائی الیکشن پر ضائع کرے ۔ اسی وجہ سے عام طور پر اچھے لوگ الیکشن میں حصہ لینے سے کتراتے ہیں ۔
وما علینا الالبلاغ ۔ اللہ سبحانہ و تعالی ہمیں اپنے آپ کو درست کرنے اور اجتمائی بہتری کے کام کرنے کی توفیق عطا فرمائے ۔ آمین ۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

 
%d bloggers like this: